حضرت علیؓ نے فرمایا کہ نہانے کے بعد یہ کام ضرور کیا کرو۔ورنہ تمہارے گھر بیماریوں کا عذاب نازل ہوگا

دین و سلام والے کے لیے یہ بہت ضروری ہے کہ وہ پاک صاف رہیں ۔کیوں کے نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا ہے کہ پاکیزگی نصف ایمان ہے اور یہ بات ہم بچپن سے سنتے آئے ہیں کہ صفائی نصف ایمان ہےحضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت علی ؓ کے بارے میں فرمایا کہ میں علم کا شہر ہوں اور علی ؓ دورازہ ہیں ۔ایک مرتبہ حضر ت علی ایک راستہ سے گزار رہے تھےایک شخص بہانے کے بعد گھر سے باہر آرہا تھا تو حضرت علیؓ اُس شخص کے پاس گئے اور فرمانے لگے کہ اسے خد ا کے بندے نہانےکے بعد ننگے سر باہرنہ آیا کرو سر پر کوئی چارد یا ٹوپی وغیرہ رکھ لیا کرو کیونکہ ننگے سر باہر آنے سے دماغ پر بُرا اثر ہوتا ہے اور بیماری کی وجہ بناتا ہے غسل کرنے سے پہلے کھانا مت کھایا کرو اس طرح حضرت علی ؓ نے ایک اور ارشاد فرمایا ہاتھ پائوں اچھی طرح سے دھونے کے بعد غسل خانہ سے باہر نکلا کرو اللہ تعالی کے کرم سے تم بہت ساری بیماریوں سے بچ جا ئوگئےجمعہ کے دن غسل کرنا لازمی ہے اور جو شخص میت کو نہالتے ہیں اُنہوں کے لیےبھی غسل کرنا ضروری ہے غسل کے لیے کم ازکم چار کلو پانی ہونا کافی ہوتا ہے اور غسل کرتے وقت پردہ کرنا بھی لازمی ہے غسل کرنے سے پہلے جو دُعا پڑھی جاتی ہے وہ نوٹ کرلیجئےاللھم انی اعوذبک من الخبث والخبائث نہانے سے پہلے جس برتن میں آپ نے پانی ڈالاہے اُس کے بھی کچھ ادب ہیں اولاً ہاتھ اور شرم گاہ دھوئے ، پھر پورا وضو کرے ، اسی درمیان منہ اور ناک میں اچھی طرح پانی ڈالے ، اس کے بعد پورے بدن پر پانی بہائے ۔ اور بہتر ہے کہ اولاً دائیں کندھے پر، اس کے بعد بائیں کندھے پر اور پھر سر پر پانی ڈالے اور بدن کو رگڑ کر دھوئے ۔ اگر غسل کے فرائض پورے کیے جائیں ، تو غسل کے بعد وضو ء کرنا ضروری نہیں ہے ، ہاں غسل سے پہلے وضو کرنا مسنون ہے۔جب غسل کرنا فرض ہو جائے تو انسان نہانے میں دیر کرتا ہے تو گناہگار ہوگا

اپنا تبصرہ بھیجیں