عامل والدہ کا نام کیوں پوچھتے ہیں ۔ جادو کرنے والےکا نام کیوں نہیں بتاتے !تمام راز فاش ۔ضرور جان لیجئے

جادو ایک ایسی لعنت ہے جو ہمارے معاشرے میں دن بہ دن پھلتا جا رہا ہے ۔مگر یہ مسلمانوں کا پیشہ نہیں ہے اور مسلمان اس کے بارے میں سوچ بھی نہیں سکتے ۔کیونکہ جاود وہ ہی کرسکتا ہے جو مرتب ہوجائے جاود شیطانی عمل ہے اور شیطان کو خوش کرنے کے لیے بہت سارے حرام کام کرنے پڑتے ہیں جن کی ہمارے مذہب اسلام میں اجازت نہیں ۔مگر آج ہم آپ کو بتائے گئے کہ جادو گر والدہ کا ہی نام کیوں پوچھتے ہیں اور اسکے پیچھے اصل کیا وجہ ہے اور آپ کے نام اور آپ کی والدہ کے نام کو کس طرح استعمال کیا جاتا ہے یاد رہے کہ جادر کرنے والااور کروانے والادونوں اسلام سے خارج ہوجاتے ہیں اگر کسی پر جادو یا جنات کا اثر ہوجائے تو اُس کو صرف آیات قرآنی اورقرآن پاک میں موجود دُعائوں سے ہی دُور کرنا چاہیں کالے جادو کے ذریعہ عمل کرنا حرام قرار دیا گیا ہے ہمارے آج کل کے معاشرے میں گلی عامل حضرات بیٹھے ہیں کچھ تو قرآن پاک سے اتنے دُور ہوتے ہیں ۔۔یاد رہے کہ قرآ ن پاک میں اللہ تعالی کی ذات نے ہر چیز کا حال رکھا ہے مگر اُس کے لیے ایمان کا پختا ہونا بہت ضروری ہےیاد رہے کہ جب عامل کو آپ اپنا اور اپنی والدہ کا نام بتاتے ہیں تو عامل آپ کی والدہ اور آپ کے نام چا ر بڑے ذریعے استعمال کرتے ہیں ۔جن میں مٹی ،آگ ،پانی ،ہوا شامل ہیں عامل ان ذریعے کو کیسے استعمال کرتے ہیں جان لیجئے جو جادو مٹی کے ذریعے کیا جاتا ہےاُسکی دو صورت ہوتی ہیں ۔پہلے اُس شخص کا پتلابن کر اُس میں سوئیا لگنے کے بعد جادو پڑ ھ کر زمین میں دفن کر کے اُس آدمی کا نقصان پہنچا جاتا ہے دوسرا اُس انسان کا جہاں کہیں پر پائوں لگے ہو اُس کی مٹی یا اُس کے بال یا کپڑے لے کر اُس پر جادو کرکے اُس شخص کے گھر کےباہر دفن کیا جاتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں