مسلم لیگ ن نے مولانا فضل الرحمان کے دھرنے میں شرکت کا فیصلہ کر لیا ہے وزیر داخلہ اعجاز شاہ قائد حزب اختلاف قومی اسمبلی شہباز شریف اور مولانا فضل الرحمن کو گرفتار کرنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں۔ مسلم لیگ ن کی رہنما عظمیٰ بخاری

: نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کی رہنما عظمیٰ بخاری نے کہا کہ ن لیگ نے مولانا فضل الرحمان کے مارچ میں شرکت کا فیصلہ کر لیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے کہا کہ حکومت اتنی بہادر ہے کہ دوسرے ملکوں کو بیچ میں لاکر مولانا فضل الرحمان کے مارچ کو رکوانا چاہ رہی ہے۔ وزیر داخلہ اعجاز شاہ قائد حزب اختلاف قومی اسمبلی شہباز شریف اور مولانا فضل الرحمن کو گرفتار کرنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں۔
عظمیٰ بخاری نے حکومت پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی کو ٹرینڈ چلانے کے علاوہ اور کوئی کام کرنا نہیں آتا۔ پی ٹی آئی محض کاپی ،پیسٹ اور کٹ کی جماعت ہے اور انہیں زمینی حقائق کو کوئی سر وکار نہیں ہے ۔انہیں صرف گالیاں دینا اور کردار کشی کرنا آتا ہے۔ یاد رہے کہ اس سے قبل سابق وزیراعظم نواز شریف کے داماد کیپٹن (ر) صفدر نے بھی عوام کو مولانا فضل الرحمان کے مارچ میں شرکت کرنے کی ہدایت کی تھی۔ان کا کہنا تھا کہ تمام امت مسلمہ جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کے مارچ میں پہنچے۔ووٹ کو عزت دو کا نعرہ لے کر نواز شریف جیل میں بیٹھے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آج ٹرمپ ہمیں للکار رہا ہے۔خیال رہےکہ جمیعت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اسلام آباد کی جانب مارچ کا اعلان کر رکھا ہے جس کی حتمی تاریخ کا اعلان تاحال نہیں کیا گیا۔
مارچ میں شرکت کے لیے جمیعت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی کو دعوت دے رکھی ہے لیکن دونوں جماعتوں کی جانب سے تاحال کوئی جواب سامنے نہیں آیا۔ مسلم لیگ ن نے مولانا فضل الرحمان کے مارچ میں شرکت سے متعلق فیصلہ آج کرنا ہے جس کا حتمی اعلان بھی ممکنہ طور پر آج ہی کیا جائے گا جبکہ پیپلز پارٹی نے اس حوالے سے تاحال کوئی اعلان نہیں کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں