پشاور کی بڑی سرکاری یونیورسٹی کا پروفیسر اسٹوڈنٹس لڑکی کے ساتھ شرمناک حرکت کرتے پکڑا گیا ۔۔ ویڈیو بھی وائرل

عام طور پر سوشل میڈیا پر بہت ساری ویڈیوز گردش میں رہتی ہیں مگر گزشتہ روز گوزنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان نے شرمناک ڈانس کی ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد بنوں یونیورسٹیئ کے وائس چانسلر عابد علی شاہ کو فوری طور پر عہدہ سے ہٹا دیا گیا ہے اوروائس چانسلر کی ذمہ داریاں عارضی طور پر وائس چانسلر بنوں یونیورسٹی سلطان محمود کو دے دی گئی ہیں

گورنرخیبرپختونخوا نے معاملہ کی باعدہ انکوئری کے لیے تین رُکنی کمیٹی قائم کر دی ہے جو کہ دس دن میں اپنی حمتی رپورٹ گورنر خیبر پختو نخوا کوارسال کرئیگی یاد رہے کہ بنوں یونیورسٹی کے وائس چانسلر کی گذشتہ روز سوش میڈیا اور ٹی وی نیو ز چینل پر کسی خاتون کے ساتھ ڈانس کرنے کی ویڈیو بہت تیزی کے ساتھ وائرل ہوئی تھی جس پر گورنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان نے فوری طور پر نوٹس جاری کر دیا اور عابد علی شاہ کو بھی عہدے سے معطل کر دیا ہے اور سیکرٹری ہائر ایجوکیشن کو حقائق پر مبنی رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت جاری کی ہےدوسری جانب بنوں یونیورسٹی کے وائس چانسلر عابد علی شاہ کا کہنا ہے کہ سوشل میڈیا پر جو ویڈیو وائرل ہوئی اُس کو سازش قرار دیتے ہوئے مزید کہا ہے کہ ان سے منسوب وائرل ہونے والی ویڈیو جعلی ہے کرپٹ عناصر کرپشن کا راستہ روکنے پر اوچھے ہتھکنڈے استعمال کر رہے ہیں انکی قیادت میں جامعہ بنوں نے قلیل عرصے میں ترقی کی وہ منازل طے کی ہیں
جو آج تک کوئی بھی نہیں کرسکا سالوں سے چلی آنے والی کریشن کو مکمل طور پر ختم کرکے یونیورسٹی کو دُوست سمت پہ گامزن کر دیا ہے ۔اب وہ کرپٹ عناصر جنکی دُکانیں ہم نے بند کر دی ہیں وہ سوشل میڈیا پر جعلی ویڈیو کے ذریعے سے سازشیں کررہے ہیں اور یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی بنوں کی ترقی رُوکنے کی کوشش کر رہے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں