پیپلز پارٹی سے نکلنے کے بعد فردوس عاشق اعوان نے ن لیگ میں شمولیت کے لئے مجھ سے رابطہ کیا تھا، محمد زبیر کا انکشاف

2017 میں جب میں گورنر تھا تو فردوس عاشق اعوان 2 مرتبہ میرے پاس آئیں تھیں اور مجھ سے خواہش کا اظہار کیا تھا کہ وہ مسلم لیگ ن میں شمولیت اختیار کرنا چاہتی ہیں، سابق گورنر سندھ محمد زبیر
پیپلز پارٹی سے نکلنے کے بعد فردوس عاشق اعوان نے ن لیگ میں شمولیت اختیار کرنے کی کوشش کی۔ نجی ٹی وی چینل میں گفتگو کرتے ہوئے سابق گورنر سندھ محمد زبیر نے اس بات کا انکشاف کیا ہے کہ پیپلز پارٹی سے نکلنے کے بعد فردوس عاشق اعوان نے ن لیگ میں شمولیت کے لئے مجھ سے رابطہ کیا تھا۔ بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ میں جب میں گورنر تھا تو فردوس عاشق اعوان 2 مرتبہ میرے پاس آئیں تھیں اور مجھ سے خواہش کا اظہار کیا تھا کہ وہ مسلم لیگ ن میں شمولیت اختیار کرنا چاہتی ہیں۔
سابق گورنر نے بات کرتے ہوئے یہ بھی اعتراف کیا ہے کہ انہوں نے اس حوالے سے فردوس عاشق اعوان کی خواہش سابق وزیراعظم نوازشریف کے سامنے رکھ دی تھی لیکن اس وقت مسلم لیگ ن کی قیادت اس کے حق میں نہیں تھی
محمد زبیر کا کہنا تھا کہ میں نے نوازشریف سے کسی قسم کی سفارش نہیں کی تھی، میں نے بس ان کے سامنے فردوس عاشق اعوان کی درخواست پیش کی تھی کیونکہ فردوس عاشق اعوان کو یہ لگتا تھا کہ شاید میں میاں محمد نوازشریف کے بہت زیادہ قریب ہوں۔
محمد زبیر نے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا ہے کہ ہمیں اس بات کا فائدہ ہوا ہے کہ فردوس عاشق اعوان نے پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کی جس کے بعد وہ حکومت کی ترجمان بنی۔ سابق گورنر کا کہنا تھا کہ جب تک وہ عہدے پر تھیں، ہمیں انہیں کام کرتے دیکھ کر لطف آتا تھا۔ خیال رہے کہ فردوس عاشق اعوان کا کچھ عرصہ قبل ہی وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے اطلاعات کے عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا جس کے بعد سینیٹر شبلی فراز کو وزارت اطلاعات کا قلمدان سونپ دیا گیا تھا۔ اس پر بھی بات کرتے ہوئے سابق گورنر کا کہنا تھا کہ شبلی فراز فردوس عاشق اعوان سے بہتر اور پڑھے لکھے انسان ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں