جھوٹے ، کمزور سہاروں سے نکل آتے ہیں ہم نے سوچا ہے کہ خوابوں سے نکل آتے ہیں . شاعرہ ثروت مختار

شاعرہ ثروت مختار جھوٹے ، کمزور سہاروں سے نکل آتے ہیں ہم نے سوچا ہے کہ خوابوں سے نکل آتے ہیں ہم سے سادہ بھی کوئی آس کا جگنو تھامے اپنے تاریک مکانوں سے نکل آتے ہیں بات کرتےہیں محبت ..مزید پڑھیں

وہ اپنے ماتھے پہ جب بھی لکیر کھینچتا ہے ادا شناس بتاتے ہیں تیر کھینچتا ہے .

شاعر توقیر احمد وہ اپنے ماتھے پہ جب بھی لکیر کھینچتا ہے ادا شناس بتاتے ہیں تیر کھینچتا ہے یہ بائیں سمت کی دھک دھک سے لگ رہا ہے مجھے، دلِ گرفتہ کی بیڑی اسیر کھینچتا ہے! کوئی نہ کوئی ..مزید پڑھیں